Agroya اگرویا

Agroya اگرویا

Agroya اگرویا

Information provided and translated by: Jamshaid Iqbal
Email Address: jmdiqbal681@gmail.com | iqbal_finance@hotmail.com

گاؤں اگرویا

اس گاؤں کے مقیم حضرات یہ فرق کرنے سے قاصر ہوتے ہیں کہ اپنے گاؤں کا نام کیسے صحیح لکھا جائے ‘اگرویا ‘ یا ‘اگرویہ’ ؟ ہم سب کو  یہ فرق واضح کر لینا چاہیئے کہ گاؤں کا نام ‘اگرویا’ لکھا جائے گا اوریہاں کے فرد کو ‘اگرویہ’ کہا جائے گا۔ جیسے ‘پاکستان’ میں بسنے والے ‘پاکستانی’ کہلاتے ہیں-

تعارف

یہ منڈی بہاؤالدین کی تحصیل پھالیہ سے 17 کلومیٹر کے فاصلے پر جنوب مشرقی کونے پر واقع ہے۔ بھاگٹ سارنگ دھبولا ، باہو مانگا ، چھنی مانگا آس پاس کے دیہات ہیں۔

یہ موسمی فصلوں پر مبنی سبز کھیتوں سے گھرا ہوا ایک خوبصورت گاؤں ہے کیونکہ یہ ایک زرعی خطے میں واقع ہے۔ اس کے  جنوبی میں قدرتی طور پر بڑھے ہوئے اور کچھ کسانوں کے ہاتھوں سے لگائے گئے خوبصورت درختوں کا گھنا جنگل ہے۔ جنوبی علاقہ دریائے چناب کے قریب ہونے کی وجہ سے  قابل کاشت اور زرخیز زمین پر مشتمل ہے  سر سبز کھیت اور درخت خوبصورت مناظر پیش کرتے ہیں جو بارش کے موسم اور  چاندنی رات کو انتہائی دل فریب ہو جاتے ہیں ۔

اگر حکومت اس خطے میں سڑکوں کا جال بچھاتی ہے تو  یہ سیاحت کا مرکز بن سکتا ہے کیونکہ یہ چناب ڈیم کے قریب ہے حالانکہ ہموار سڑکیں ، مناسب نقل و حمل کا نظام ، منظم اسپتال ، سپر مارکیٹ اور حکومت کی مدد سے دیگر سہولیات کی کمی ہے۔  اس کے باوجود دیہاتی اپنے گاؤں کو جدید ضروریات سے آراستہ کرنے کی انتھک کوشش کر رہے ہیں۔

ہیڈ رسول سے نکلنے والی نہر ساہنپال ، رنمل شریف اور سارنگ، اگرویا کے درمیان سے گزر تے ہوئے دریائے چناب میں شامل ہو جاتی ہے۔ اگر اس نہر میں کشتی رانی اور چھوٹے بحری بیڑوں سے سامان کی نقل حمل کے لئے ملاحوں کو لائسنس دیئے جائیں تو کافی تعداد میں علاقے کے لوگ روزگار کے نئے مواقع سے مستفید ہو سکتے ہیں اور اس پیش رفت سے مزکورہ نہر مصر کی نہر سویز کا منظر پیش کرے۔ پاکستان کی 60٪ آبادی دیہی علاقوں پر مبنی ہے لہذا حکومت کو دیہی ترقی پر توجہ دینا ہوگی۔

مختصر تاریخ

تاریخ انسانی کی ابتداء سے ہی  انسان پانی کے وسائل کے قریب رہ رہا ہے ۔  آج بھی دنیا کے نقشہ پر نظر دوڑائی جائے تو اندازہ ہوتا ہے کہ ذیادہ آبادیاں جھیلوں ، ندیوں یا سمندر کے قریب ہیں تاکہ روز مرہ کی ضروریات اور کاشتکاری کے لیے پانی کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔ یہی وجہ ہے کہ 1800ء کے آس پاس ہمارے آباؤ اجداد نے بھی مختلف علاقوں سے ہجرت کر کے دریائے چناب کے قریب رہنا پسند کیا۔

ہمارے باپ دادا نے آگاہ کیا ہے کہ 1900ء سے پہلے آبادی اتنی ذیادہ نہیں تھی کہ زمین ملکیت  کے لئے چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں بانٹ لی جائے۔ لوگ زرخیز زمینوں کی تلاش میں رہتے تھے ، اس سلسلے میں جاٹ ، تارڑ ، ترکھان ، لوہار ، کمہار ، موچی ، چغتائی ، رانجھا ، ماچی ، نائی ، مخدوم ، چوہان اور مسلم شیخ ؛ شادی والا ، جاسو سدھو کی اور دیگر علاقوں سے نقل مکانی کر کے دریائے چناب کے کنارے رہنے لگے۔ اس زمانے مین لوگ مٹی کے مکانوں میں رہتے تھے ، ایک بار جب سیلاب نے دریائے چناب کو نشانہ بنایا ، کچی آبادیوں میں سیلاب کا پانی پھیل گیا ، سیلاب کی تیز لہریں فصلیں اور جانور بہا لے گئیں اور آس پاس کی تمام مٹی کی تعمیرات تباہ ہوگئیں۔

اس کے بعد ہمارے آباؤ اجداد نے دریائے چناب کے کنارے سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر گاؤں دوبارہ آباد کیا۔ مگر بارش کے موسم میں چند سالوں کے بعد سیلاب نے کچھ اضافی تباہی مچائی اور دیہاتی ایک بار پھر بے گھر ہوگئے۔

پھر تیسری بار ، اگرویا گاؤں کی تعمیر ، موجودہ مقام شمال کی طرف دریائے چناب سے پندرہ کلومیٹر  کے فاصلے پر  جنوب کی طرف سارنگ اور بھاگٹ کے قریب کی گئی۔ سکھوں (کھتریوں) کے دو / تین خاندان رہتے تھے لیکن وہ 1947 کی تقسیم کے بعد ہندوستان ہجرت کرگئے اور ان کے مکان مہاجرین کے حوالے کردیئے گئے۔

آبادی

آبادی اور رقبے کے لحاظ سے اگرویا قریب کے تمام دیہاتوں سے بڑا گاؤں ہے۔ آبادی اور رقبے کے بارے میں عین مطابق اعداد و شمار بیان نہیں کیے جاسکتے ہیں۔ اگرویا گاؤں کی آبادی 8000 افراد پر مشتمل ہے ، اور اس گاؤں کے زیر زمین رقبے کا تخمینہ 40 مربع کلومیٹر  ہے۔

 

60 فیصد آبادی زراعت سے وابستہ ہے باقی آبادی نے مقامی روز مرہ کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے دوسرے مختلف پیشے اپنائے ہوئے ہیں۔  ذات پات کے فرق سے قطع نظر ، تعمیراتی ، ڈرائیونگ اسٹور کیپنگ کے شعبے میں بیرون ملک خدمات سرانجام دینے والے دیہاتیوں کی ایک بڑی تعداد  وطن عزیز کے لئے زر مبادلہ اور اپنے اہل خانہ کے لئے روزی کما رہی ہے۔

فصلیں:

پھل اور سبزیوں  کی کاشتکاری

اگرویا کے علاقے میں ایسی فصلیں اگائی جاتی ہیں جیسے پورے منڈی بہاؤالدین ضلع میں۔ جیسے گندم ، چاول ، مکئی ، تمباکو ، گنا ، سورج مکھی اور مویشیوں کے لئے ہر طرح کا چارہ اس گاؤں میں وافر کاشت کیے جاتے ہیں۔  اگر ہم پھلوں کے بارے میں بات کریں تو ، خربوزہ اور تربوز ہمارے خطے میں  وافر کاشت کیے جاتے ہیں ، دیگر پھلوں کی پیداور بہت کم ہےاور یہاں تک کہ مقامی مارکیٹ کی ضروریات پوری نہیں ہو پاتی حالانکہ اس خطے میں آم اور سنترے کے باغات اگانے کی کافی صلاحیت موجود ہے۔ عام طور پر سبزیوں میں گاجر ، مولی ، شلجم ، بھنڈی توری، کریلا، کدو ، پالک اور ساگ اگائے جاتے ہیں۔

مچھلی بانی

ہمارے خطے میں  سابقہ تیس سالوں کے دوران ماہی گیری ،مچھلی کی پرورش اور  اس کی تجارت کو بہت ترقی ملی ہے- اس خطے میں مچھلی منڈیوں اور مچھلی بانی کو عروج دینے میں بشیراحمد بھاگٹ مرحوم اور ان کے بیٹوں کا نہایت اہم کردار ہے، ان کے توسط سے بے شمار نوجوان طبقہ بر سر روزگار ہوا ہے۔  اگرویا گاؤں ہر سال  اس صنعت کی تجارت میں 500 ٹن مچھلی کا حصہ ڈالتا ہے۔ ریٹارڈ صوبیدار محمد خان مچھلی منڈیاں بنانے اور انھیں ترقی دینے میں نمایاں کردار رکھتے ہیں، اس کے علاوہ محمد خان کمہار، محمد افضل تارڑ، محمد عظمت تارڑ اور ظہیر احمد بٹ  بڑے مچھلی بانوں میں شمار ہوتے ہیں۔

ممتاز شخصیات

اگرویا کے عظیم ’’ مرحومین ‘‘ کو یاد کیے بغیر یہ سب بحث بے معنی ہے ، انہوں نے ہمارے معاشرے میں ایک شاندار کام کا حصہ ڈالا ہے۔

غلام حسین مخدوم

میرے علم کے مطابق غلام حسین مخدوم مرحوم اگرویہ دیہات میں پہلےشخص تھے جو اسلام اور قرآن کے بارے میں کافی علم رکھتے تھے ، انھوں نے نئی نسل کی  خاطر ذمہ داری کے ساتھ خدمات انجام دیں اور پوری زندگی اسلام اور قرآن مجید کی تفہیم کے لئے صرف کی۔ مسٹر اور مسز رشید مخدوم اسلامی خدمات کے لئے بھی کافی یادگار ہیں۔

مظہر اقبال تارڑ شہید

وہ پاک فوج کا بہادر سپاہی تھا۔ انہوں نے 2003 میں ’وانا‘ آپریشن وازیرستان کے دوران بھارت کے حمایت یافتہ طالبان کے خلاف لڑتے ہوئے ‘شہادت’ کو گلے لگا لیا۔

محمد افضل تارڑ شہید

وہ پاک فوج کا ایک اور بہادر ’جوان‘ تھا؛ انہوں نے اسی جنگ کے میدان میں 2008 میں ’شہادت‘ پائی۔  پاک فوج کی طرف سے گارڈ آف آنر کے ساتھ گاؤں میں دفن ہوئے۔

محمد سلیم رانجھا مرحوم

وہ ایک متقی سماجی شخص تھا ، ہمیشہ معاشرے کی فلاح و بہبود کے بارے میں بات کرتا تھا۔ ان سب کے علاوہ ، وہ جامع مسجد اگرویہ کا ایک سرگرم ملازم اور مالیاتی خزانچی تھا۔

اعلی تعلیم میں قائدین

ریٹائرڈ ہیڈ ماسٹر ایلیمنٹری اسکول گھنیاں محمد اللہ دتہ چوہان ، کاتب القرآن۔ اللہ دتہ صاحب نے اپنی خوبصورت تحریر سے قرآن کی بہت ساری نقلیں تیار کیں۔

اگرویا گاؤں سے پہلے کمیشنڈ آفیسر ریٹائرڈ کرنل محمد عنایت تارڑ نے پاک فوج کے لئے خدمات انجام دی ہیں ، آپ 20 جولائی 2020 کو اپنے خالق حقیقی سے جا ملے۔ عنایت صاحب نے اپنے پوری زندگی پاک آرمی اور اولاد کی تعلم و تربیت کے لئے وقف کر دی تھی۔ ان کے تمام بچے اعلٰی تعلیم یافتہ ہیں اب ان کے دو بیٹے بھی کرنل کے عہدہ پر فائز ہیں اور پاک فوج میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔ ان کا ایک بیٹا میڈیکل شعبہ سے وابستہ ہے اور ایک کاروبار کے شعبہ سے۔

جاوید اقبال ولد بشیر احمد ترکھان بی ایس سی ریاضی ، ایم بی اے ، ایم فل فنانس ، پاکستان ایئر فورس (چیف ورنٹ آفیسر)۔

صفدر اقبال ولد  اللہ دتہ چوہان ایم کام۔ فنانس منیجر پیل الیکٹرانکس کمپنی لمیٹڈ لاہور۔

ریاست علی تارڑ  بی-ایس-سی ریاضی ایڈوکیٹ ، پرنسپل محمڈن ماڈل اسکول پھالیہ۔

انصر اقبال ولد اللہ دیتہ چوہان ؛ ایم-کام- چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ ، آڈیٹر کے طور پر متعدد  پرائیویٹ کمپنیوں کے لئے کام کیا۔

دیگر تعلیمی اور حکومتی خادمین

  • محمد آمین رانجھا ، سابقہ پوسٹ آفس انچارج اور ریٹائرڈ ہیڈ ماسٹر پرائمری اسکول اگرویا۔
  • محمد اعظم چغتائی ثانوی اسکول میں استاد دھریکاں کلاں۔
  • ملک محمد اشرف پرائمری اسکول ٹیچر دھوبلا۔
  • بشیر احمد تارڑ پرائمری سکول ٹیچر مانگا۔
  • صفدر مراد تارڑ پرائمری اسکول ٹیچر مانگا۔
  • محمد اختر چوہان پرنسپل قائد اعظم ماڈل اسکول اگرویا۔
  • قاسم علی ولد غلام عباس تارڑ، ایم ایس۔ ایم فل فزکس۔ لیکچرر پنجاب کالج پھالیہ۔
  • اتنی ہی تعداد میں خواتین جو متعلقہ پیشہ میں بھی خدمات انجام دیتی ہیں۔

ریٹائرڈ کرنل محمد شیر تارڑ ، ریٹائرڈ صوبیدار ارشاد تارڑ ، سجاد تارڑ ، منشا تارڑ ، ندیم عباس ، محمد مظہر تارڑ ، محمد خالد تارڑ، زاہد عمران مخدوم، شاہد عمران تارڑ، ملک سیف اللہ  پاک فوج کے سرگرم خدمت گار ہیں یا خدمات سرانجام دے چکے ہیں۔

 

سماجی شخصیات

  • حافظ محمد منشاء ، جامعہ مسجد اگرویہ
  • ملک شبیر احمد ، ریڈارڈ وارنٹ آفیسر پاک فضائیہ۔ فلاحی کمیٹی اگرویا کے لئے سرگرم شخص
  • گاؤں کی فلاح و بہبود اور مسجد کے فنڈز کے باقاعدہ انچارج۔
  • پیر معظم علی شاہ ، ایک روحانی ڈاکٹر۔
  • محمد کاشف تارڑ ، شریک بانی کیران پبلیکیشنز لاہور۔ مسلم لیگ ن یونین کونسل دھریکاں کلاں کے سرگرم رہنما۔
  • مستری محمد اصغر ، چاول، آٹا اور لکڑ آرا جیسی منی ملز کے مالک گاؤں بھر کے لئے متعلقہ مشنری کے ذریعے ضروریات زندگی پورا کرنے میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔
  • حاجی تنویر احمد اور حافظ امتیاز احمد ، وقاص فرنیچر ہاؤس پھالیہ کے مالکان۔
  • محمد خان تارڑ ، یونائیٹڈ بک ہاؤس منڈی بہاالدین کے مالک۔
  • ملک محمد یاسین چاول اور گندم کے تاجر۔
  • ملک مشتاق احمد ، ملک محمد بوٹا ، ممتاز احمد رانجھا ، صفدر اقبال ترخان ، آصف موچی ، باوا صوبے شاہ اور غلام عباس ترکھان دیہاتیوں کی روز مرہ ضروریات کو پورا کرنے کے لئے انفرادی طور پر جنرل اسٹور کے مالکان ہیں۔
  • ملوک محمد عرفان ، پھالیہ ریجنل سیل منیجر پراکٹراینڈگیمل کمپنی پاکستان۔
  • مویشیوں کے چارے کی دکانوں کے مالک محمد اصغر تارڑ۔
  • اعجاز احمد ندیم جنرل اسٹور ، حاجی محمد بوٹا اسپیئر پارٹس اسٹور ، ریاض احمد کنسٹرکشن میٹریل اسٹور ، مشتاق احمد رانجھا ھول سیل اسٹور ، اڈا رنمل شریف۔
  • مستری فاروق احمد ، مستری اللہ التہ ، مستری شہباز احمد ، عمارتی تعمیرات کے شعبہ سے وابستہ ہیں۔
  • زراعت اور تعمیر کے میدان میں کام کرنے والے فعال لوگوں کی ایک بڑی فہرست ہے۔

ابھرتی ہوئی جوان نسل

نوجوان پورے عزم کے ساتھ زندگی کے ہر شعبے میں ذمہ داریاں ادا کررہے ہیں ، ان میں سے کچھ کا تذکرہ یہاں کیا جارہا ہے۔

  • عبد الرحمٰن و محمد عامر ولد حافظ محمد منشا صاحب ، عدیل منشا مانگٹ اور عبدالوہاب ترکھان پاک فوج میں سپاہی کی خدمات انجام دے رہے ہیں۔
  • ایس پی محمد حسن تارڑ ، محمد انار تارڑ اور تصور حسین تارڑ پنجاب پولیس میں خدمات انجام دے رہے ہیں۔
  • سول انجینئر فیض رسول ترکھان ، سجاد احمد رانجھا ، محمد زبیر تارڑ ، محمد اویس رانجھا، محمد زبیر رانجھا ، حمزہ آمین ،نوید اعظم چغتائی اور ملک کامران تعمیراتی میدان میں پیشہ ورسرویئر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔
  • روزانہ دودھ ، گوشت اور کھانے کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے زراعت اور مویشیوں کی کھیتی کے میدان میں خدمت کرنے والے مخفی فوجیوں کی ایک بڑی تعداد شامل ہے-
  • طاہرمنظور تارڑ پاکستان تحریک انصاف کے مخلص اور فعال کارکن۔

اسکول

نئی نسل اور ان کے والدین زندگی کے ہر پیشے اور بین الاقوامی چیلنجوں میں تعلیمی ضروریات سے بخوبی واقف ہیں۔ لہذا معاشرے کو جدید تعلیم سے آراستہ کرنے کے لئے سرکاری اور نجی شعبے سرگرم عمل ہیں۔

حکومتی سکول

  • گورنمنٹ ایلیمنٹری گرلز اسکول اگرویا۔
  • گورنمنٹ بوائز پرائمری اسکول اگرویا۔

نجی سکول

  • نوشاہی پبلک ہائی اسکول اگرویا
  • قائداعظم پبلک ہائی اسکول اگرویا
  • سائج پبلک ہائی اسکول اگرویا

مساجد

  • انوار مصطفی جامعہ مسجد ایگرویہ ، جدید سہولیات سے آراستہ ہے۔
  • نوشاہی مسجد اگرویا ، تمام ضروری سہولیات سے آراستہ کرنے کے لئے زیر تعمیر۔

مواصلات کے ذرائع

ٹیلیویژن جس میں ڈش اینٹینا ، لاؤڈ اسپیکر ، موبائل فون ، لینڈ لائن فون اور انٹرنیٹ موجود ہے۔

کھیل

کرکٹ: – ایگرویائی نوجوان اس کھیل پر مسحور ہیں۔ ہر دو سال کے بعد؛ علاقائی چیمپین شپ ایگرویا میں منعقد ہوئی۔ تقریبا 20 ٹیمیں ایونٹ میں حصہ لیتی ہیں۔ ملاک عرفان اور صفدر مراد کی نگرانی میں اس پروگرام کا اہتمام کیا گیا ہے۔ ایگرویا اور سارنگ کرکٹ کھیل کے تاریخی حریف ہیں۔ وہ ایک دوسرے کے ساتھ وقتا فوقتا دوستانہ میچ کھیلتے رہتے ہیں

کبڈی: – یہ کھیل زیادہ تر جوش و خروش کے ساتھ اگرویا میں کھیلا جاتا ہے۔ اگرویا اور گھنیاں اس کھیل کے تاریخی حریف ہیں ، اور ایک دوسرے کو اس کھیل  کی دعوت دیتے  رہتے ہیں۔

کچھ دوسرے کھیل مثلا” فٹ بال ، ہاکی ، والی بال بھی کھیلے جاتے ہیں، لیکن اتنے منظم نہیں جیسے کرکٹ اور کبڈی۔

زیارتیں

مشرقی قبرستان میں دفن دادا جیون شہید ، ایک قصہ عام طور پر اس ولی کے بارے میں بیان کیا جاتا ہے ، انھیں دشمنوں کے ذریعہ مرالہ میں قتل کیا گیا تھا۔ ایک ظالمانہ شخص نے اپنے سر اور جسم کو تلوار سے جدا کردیا ، اس کے بعد ان کا سر اللہ کے فضل سے بولا اور بتایا کہ قاتل کون ہے ، اسی وجہ سے لوگ انھیں ‘جیون شہید’ کہتے ہیں۔ ولی اللہ کے اصل نام کا پتہ نہیں چل سکا-

Location

It is situated at a distance of 17 km from Phalia Tehsil on South-East dimension. Bhagat, Sarang, Dhabola, Baho Manga, Cahnni Manga are neighboring villages all around.

It is a beautiful village surrounded by green fields of seasonal crops because it is located in an agricultural region. Its North side comprises waste fertile land for cultivation and variety of beautiful trees naturally grown up, show a beautiful scenery which is worth-watching in the moon-soon season.

If Government develops a net of roads in this region, it can become center of Tourism because it is close to the Chenab dam.  Even though there is lack of facilities like plane roads, proper transportation system, organized hospital, super markets and other government-supporting facilities, nevertheless villagers striving to equip their village with modern needs.

Pakistan’s 60% population based on rural areas hence government must focus on rural development.

Brief History

Since the beginning of human history the man has been living near water resources in the form of lake, river or sea to make sure the availability of water for cultivation and daily usage. This was the reason, originally Agroya village developed on the bank of Chenab-River in early 1800.

Our ancestors told, before 1900 population was not too large to divide the land for ownerships. People used to search for fertile lands, in this regards few families of different castes like Tarar, Tarkhan, Lohar, Komhar, Moochi, Chughtai, Ranjha, Maachi, Nai, Makhdooms,  Chohaan and Muslim-shaikh started living on the bank of Chenab-River, migrated from Shahedan-Wala, Jassu-Saddu-ki and other areas. In those days people used to live in mud houses, once flood hit the Chenab-River spread on waste area, flood tides flew away crops, animals and nearby all mud construction ruined.

There after our forefathers constructed the village at a distance of some five/six kilometer from the river bank. After few years in the rainy season flood hit again with some extra destruction and villagers were homeless.

Then third time, the construction of Agroya village, the current location took place at fifteen kilo meters away from Chenab-River on the North. There were living two/three families of Sikhs(Khatrees) but they migrated to India after 1947 separation and their houses handed over to Mahajreens.

Population

Agroya is the largest village than all nearby 4/5 villages according to population and area. Exact figures can’t be described about population and area. Population 8000 persons and area 35 kilometer in square estimated.

Occupations

Almost 60% of the village population is concerned to agriculture rest of the population adopted other occupations to fulfill the local day to day needs, regardless of caste differences a large number of villagers serving abroad in the field of construction, driving, store keeping, and so-forth.

Crops, Fruits, Vegetables and Fish-farming

The same crops grown in Agroya region as in whole Mandi-Baha-Uddin like wheat, rice, maize, tobacco, sugarcane, sunflower and all sort of fodder for cattle.

If we talk about fruits, melon and water melon are fondly grown in our region, other fruits almost nil even can’t fulfill local needs though there is enough potential to grow up mango and orange gardens in the region.

Among vegetables normally Carrot, Radish, Turnip, Guava, Ladyfinger, Bitter gaur, spinach and ‘Saag’ are grown.

During the last two decade the fish-farming industry developed a lot in our region for the best use of damp soul, Agroya village contributing almost 500 ton fish every year in the national fish merchandising.

Legends

All is meaningless without memorizing the great “Marhooms” of Agroya, they contributed something glorious in the society.

  • Ghulaam Hussain Makhdoom

He was the first man in Agroya village who had the enough knowledge about Islam and Quran, He served for new generation with responsibility and spent his whole life to get understand the Islam and reading of Quran. Mr. & Mrs. Rasheed Makhdoom are also quite memorable for Islamic services.

  • Mazhar Iqbal Tarar Shaheed

He was a brave soldier of Pakistan army; embraced “Shahadat” during the “Wana” operation Wazirastan in 2003 while fighting against Endian backed Talibans.

  • Mohammad Afzal Tarar Shaheed

He was another gallant ‘Jawan’ of Pakistan army; also embraced “Shahadat” in the same battle field in 2008. Both ‘Jawans’ buried in the village with guard of owner by Pak-Army.

  • Mohammad Saleem Ranjha Marhoom

He was a pious social person, always used to talk about welfare of the society. Besides all, He was an active servant and financial controller of Jamia Masjid Agroya.

Leaders in higher education

  1. Ansar Iqbal S/O Allah Ditta Chohaan Chartered Accountant Pel Inc. Ltd. Lahore.
  2. Mohammad Khan S/O M. Anaar Tarar Advocate Tehsil Phalia.
  3. Safdar Iqbal S/O Allah Ditta Chohan M.com, Finance manager Pel Inc. Ltd. Lahore.
  4. Liaqat Hayat B.sc Maths, B.ed, Advocate and school principal Gujrat.
  5. Javed Iqbal S/O Basheer Ahmed Tarkhan B.sc Maths, B.ed, MBA, Pakistan Air force.
  6. Mohammad Anayt Tarar Retired Major Pakistan Army.

Other Education Servants

  1. Mohammad Ameen Rajha, Retiered head master primary school Agroya.
  2. Mohammad Azam Chughtai Elementary school teacher Dharekan Kalan.
  3. Basheer Ahmed Tarar Primary school teacher Agroya.
  4. Safdar Muraad Tarar Primar school teacher Manga.
  5. Mohammad Ashraf Malk primary school teacher Dhabola.
  6. The same number of women also serving in relevant profession.

Social Personalities

  • Hafiz Mohammad Mansha, Imam Jamia masjid Agroya.
  • Malak Shabbir Ahmed, Retired Warrant Officer Pakistan Air Force.
  • Malak Basheer Ahmed, Financial controller Jamia masjid Agroya.
  • Peer Moazam Ali Shah, Spiritual Doctor.
  • Mohammad Kashif Tarar, owner ‘KIRAN’ publications Urdu bazar Lahore.
  • Ali Ahmed Number daar
  • Mohammad Afzal Tarar, Business Man.
  • Mohammad Asghar, Owner of Mini Mills for rice, flour and wood saw.
  • Mohammad Khan Tarar, Owner of United book house Mandi Baha Uddin.
  • Asjad Tarar, Pakistan book house Palia.

Merchants

  • Malak Mohammad Anwar and Malak Yaseen wheat, rice and other food item, selling/buying on a large scale.
  • Zaheer Butt, Fish-forming.
  • Mohammad khan komhar fish forming.
  • Azmat-ullah Tarar fish forming.
  • Mohammad Asghar Tarar, Cattle fodder store.

Emerging Youth

The youth is performing responsibilities in every field of life with full commitment, few of them being mentioned here.

  • Army: Zahid Makhdoom, Malak Saif ullah, almost 10 other…
  • Police: Mohammad Anaar Tarar, Tasawwar Hussain Tarar…
  • Surveyor: Faiz Rasool, Zubair Tarar, Akbar Sajjad, Awais Saleem, Naveed Azam…
  • Commerce: Dilawar Hussain Tarar NADRA personnel…
  • Agriculture: Mohammad Shoaib Tarar, Ashfaq ahmed dairy-former, Zaqa-Ullah Tarar, Tahir Manzoor and lot more…

Schools

  1. Government Elementary Girls School Agroya.
  2. Government Primary Boys School Agroya.
  3. Noshahee Public High School Agroya, Co-education.

Masjidis

  1. Anwaar-e-Mustafa Jamia Masjid Agroya.
  2. Noshahee Masjid Agroya.

Sources of Communication

Loud speakers, Mobile phones, landline phones and Internet.

Games

  • Cricket

Agroyian youngsters fascinated of this game. After every two/three year regional championship is held in Agroya. Almost 20/25 teams participate in the event. Event is well organized under the supervision of Malak Irfan and Safdar Muraad. In 2012 championship, after thorny competitions Sarang and Luck reached in final and Sarang won the championship with close margin. Agroya and Sarang are historical rivals in cricket; they keep on playing friendly matches time to time with each other.

  • Kabaddi

It’s another game mostly played in Agroya with enthusiasm. Agroya and Ghaniyan are historical rivals in this game, and invite each other to play this game.

Few other games are also played like football, hockey, volley ball, but not so organized as cricket and kabaddi.

Shrines

Dada Jevin Shaheed, buried in east graveyard, a tale commonly described about this saint, He was murdered in Murala by enemies. Cruel-man separated his head and body by sword there after his head spoken out and told who the murderer was, that is why people call him ‘Jevin Shaheed’. Actual name can’t be found.

  1. Baaley Shah, graved in center of the village! no popular tale.
  2. Bahaar Shah, his soul rests in west graveyard, tale can’t be traced.

 

 

Information provided and translated by:
Mr. Jamshaid Iqbal
Email Address:
jmdiqbal681@gmail.com | iqbal_finance@hotmail.com

For any correction, please contact to Mr. Jamshaid Iqbal at jmdiqbal681@gmail.com or email to us at news.mbdin@gmail.com 

 

Last updated: 11 August 2020

  • Saqib Ullah Tarar

    Saqib Ullah Tarar

    November 14, 2019

    I am A civil Engineer..

  • Saqib Ullah Tarar

    Saqib Ullah Tarar

    November 14, 2019

    Civil Engineer

  • Jamshaid Iqbal

    Jamshaid Iqbal

    April 11, 2020

    Sir!
    My name is Jamshaid Iqbal, MBA qualified and I belong to Village Agroya Mandi Bahauddin.
    I’ve written the history of Agroya in 2012 then I sent it’s soft copy to the Admin of M.B.Din website but the admin has ignored my name. My name is not mentioned along with the history easy of Village Agroya.
    Please insert if possible.
    For more details you may contact me
    jmdiqbal681@gmail.com
    +966506684786 WhatsApp

  • Jamshaid Iqbal Mirza

    Jamshaid Iqbal Mirza

    April 11, 2020

    Sir!
    My name is Jamshaid Iqbal, MBA qualified and I belong to Village Agroya Mandi Bahauddin.
    I’ve written the history of Agroya in 2012 then I sent it’s soft copy to the Admin of M.B.Din website but the admin has ignored my name. My name is not mentioned along with the history easy of Village Agroya.
    Please insert if possible.
    For more details you may contact me.
    +966506684786 WhatsApp

  • Waqar mehdi tarar advocte

    Waqar mehdi tarar advocte

    May 1, 2020

    Sir main chata ho k ranmal sharif ak historical place ha nosho pak ki aram gah ha or hmary village ki persnalities ch. Nazeer tarar
    Ch.Muhammad anayat tarar
    Dildar shah civil judge
    Mahwish nazeer tarar civil judge
    Naeem ulhaq nushai advocate. Ex D.D.P.P
    Waqar mehdi tarar advocate
    Muhammad khawer tarar advocate
    Muhammad Sanwal tarar advocate
    Muhammad nawaz tarar excienایکسین (late)
    Rafaqet hayat cheirperson چئرپرسنsuffa modal school and collage.
    Gulam qader tarar
    And famous families of nosha gunj bakhsh

Leave your comment
Comment
Name
Email