fabric api, minecraft mod, optifine hd, mod apk, mod apk games
Skip to content Skip to left sidebar Skip to footer

Culture

Chaarpai چارپائی

Chaarpai  چارپائی

Charpai/manji is an ancient furniture style still used extensively today charpoy is very light bed a single man can carry. The Charpoy is very versatile and functional piece of furniture we have taken this simple design to make many different pieces of furniture thus we have several sizes which include beds benches and footstools.

“Char Paya” in Persian meanings four footed bed stead of woven webbing or hemp stretched on a wooden frame on four legs common in this subcontinent of Indo-Pak the bed used in Pakistan India consisting of a frame strung with tapes or light rope. Charpoy is an important part of the lives of the Pakistani people it used as bed at night and for guest offered charpoy to sit and relax.

A manji is a traditional hand woven bed used all over Pakistan specially the villages of Pakistan it consists of a wooden frame bordering a set of knotted ropes. Charpoy is traditionally made of wood and its feet or (poy) are beautifully carved or decorated with lacquer or paints. It’s knitted with date palm leaves or a rope made of jute. Now a day’s charpoy also made of Iron pipe and knitted with colorful plastic rope.

Charpoy is multi uses furniture it used not only at home but at commercial basis on long route the village hotels used charpoy and serves food on it the traveler takes rest at mid journey the truck driver spend their night on these charpoy at road side hotels and restaurants. Char payee means four footed bed in saraiki and Punjabi it called manjaa or manjee and in Sind it called khatt khaatt or khattra or khatya traditionally user would lie directly on top of the ropes without an intervening mattress. It’s making begins with the tying of a life knot at one corner of the bed. In dera ghazi khan the big charpai is also called ahamacha this city has the world’s largest charpai

Punjab Games

Kikli

This is another game, basically for women. Two girls clasp their hands and move in circle. This was a game, which was played by two or four girls and multiple of two thereof.
Kikli kleer di,
Pag mere vir de,
Daupatta mere bhai da
Phitte mun jawai da

Kokla Chhapaki

This game is popular even today amongst the children. Both boys and girls play it. Children sit in a circles and a child who has cloth in hand goes around the circle-singing: It is a kind of warning for the children sitting in a circle not to look back. The cloth is then dropped at the back of a child. If it is discovered before the child who had placed it there had completed the round, the child who discovered the cloth would run after him and try to touch him with it till he sits in the place vacated by the one who had discovered the cloth.

Chicho Chich Ganerian
This game is for both boys and girls. It is generally played by two teams and involves drawing as many vertical lines as possible.

Lukan Miti (Hide & Seek)

This was also played by both boys and girls and continues to this day. Two teams can also play this. One has to hide, the other has to seek but before doing it a call is given.

Guli Danda

This is basically a game for the boys and is the simplest version of modern cricket. It is played with a wooden stick and ‘guli’ (another small wooden piece pointed at both the ends.) Two teams divide themselves, one throws the guli and the other team uses the danda- (stick) to strike it. There are various other games that are played with Guli Danda

Kidi Kada or Stapoo

This is a game played both by the girls and boys. It is still common amongst some of the children. This game is played with in small boundary (court), drawn on the ground and a piece of stone.

Ghaggar Phissi
This is another game for the boys. One boy would bend and the other boys, may be one or two or three get on top of him, if he could bear the weight, he would win. In case he could not bear the weight and fell, he would lose.

Kabbadi
This game is popular even today and is played now by both boys and girls. This was included in the Asian Games also and is popular all over south Asia. The game is played between two teams. A line is drawn between the two teams and each team would send a player across the line. If the player after crossing the line is able to touch a player of the opposite side and came back without being caught, the team doing so would win and a point was added to its score. This process by the player crossing the line has to be performed in a single breath. The team with higher score would be the winner

Rasa Kashi (Tug of War)
The men generally played this game. These day’s women also participate in the game which is played by two teams. A line is drawn between the two teams, each having one end of the rope in its hands. The team, which is able to drag the other team to its side, is the winning team.

Akharas
These were very popular. Located near the well outside the village, sometimes near the temple. These were the places where the boys learnt wrestling from a Guru or Pehlwan-Wrestler.

Martial Art
This was also a part of the teaching in Akharas, where the boys learnt the use of weapons. Nihangs practice martial arts to keep up the traditions.

Kite Flying (Patang Bazi)
It is now very much an urbanized game and is popular with the rural folks as well. It has now assumed an International character.
Besides the games mentioned above, Chaupat, Shatranj (Chess), camel and bullockcart races, cock fights in addition to Kabutar bazi, chakore bazi and bater bazi are well known.
LATTOO ( yo-yo), played mostly by the boys.

 

Bandar Qilla (Baander killa)

Bandar Qilla (Baander killa)

A famous game used to play in streets or play grounds is BANDAR QILLA. The stuff needed to play this game is a nail, pillar or a tree and a rope 3 to 4 feet long. 3 or more people can play this game. Joy and pleasure attached to the game is directly related to the number of participants, the game becomes even more interesting if greater number of players join it.

گلی ڈنڈا

یہ کھیل بنیا دی طور پر لڑ کوں کا کھیل ہے اورر جد ید کرکٹ کی ایک قسم ہے۔ یہ ایک بہت ہی پسند یدہ کھیل جو تمام علا قوں میں کھیلا جا تا ہے۔
طر یقہ کار:یہ کھیل ایک لکڑی کے ڈنڈے اورگلی کے سا تھ کھیل جا تا ہے۔ دو ٹمیں برا برا تقسیم کی جا تی ہے۔ایک ٹیم گلی پھینکتی ہیں اور دو سری ڈنڈا استعمال کر تی ہے۔ ڈنڈا اس گلی کو ما ر نے کے لئے استعما ل کیا جا تا ہے۔ز مین میں ایک کھتی کھو دی جا تی ہیں ۔ گلی کو اس کھتی پر رکھ کر ڈنڈے کی مدد سے ا چھا لا کر دور پھینکی جا تی ہے کھتی کے سا منے کچھ فا صے پر مخا لف ٹیم کے کھلا ڑی کھڑے ہو تے ہیں اگر وہ گلی کو زمیں پر گرنےسےپہلے لو چ لیں تو کھیلنے والے کی با ری ختم ہو جاتی ہے اس کی جگہ دوسر اساتھی آجاتا ہے اگر گلی زمین پر گر جائے تو ڈنڈے کو کھتی پر رکھ دیا جا تا ہے مخا لف ٹیم کا کھلا ڑی گلی سے ڈنڈے کو نشا نہ بنا تا ہے۔اگرگلی ڈنڈے کو لگ جائے تو با ری ختم ہو جا تی ہے۔اگر گلی ڈنڈے کو نہ لگے تو کھلا ڑی زمین پر گری ہو ئی گلی کودو چو ٹیں لگا تا ہے۔اسےٹل لگا نا کہتے ہیں۔گلی جہاں بھی گر ے مخالف اسے وہاں سے اٹھا کر کھتی پر رکھے ہو ئے ڈنڈے کو نشا نہ بنا تا ہے۔ اگر گلی ڈنڈے کو لگ جائے تو کھیلنے والے کی باری ختم ہو جا تی ہے۔اس طرح یہ کھیل جا ری ریتاہے۔
پتنگ بازی

یہ بھی اس علاقے کے لڑکوں کا بہت پسند یدہ کھیل ہے ۔موسم بہار میں تو ہر طرف رنگ برنگی پتنگیں فضا میں اڑتی نظر آتی ہیں

بنٹے

یہ کھیل صرف لڑکے ہی کھیلتے ہیں ۔اوریہ کھیل ہمارے علاقے میں بہت مشہور ہے۔یہ کھیل لڑکے بہت شوق سے کھیلتے ہیں۔
طر یقہ کار:اس کھیل میں دو ٹیمیں برا برا تقسیم کی جا تی ہیں۔ ایک گول دا ئرہ بنا یا جا تا ہےاور اس کے اندر چھو ٹی سی لکیر لگائی جاتی ہےاور دو نو ںٹمیں چار چار بنٹے اس لکیر کے او پر ر کھتے ہیں۔ اور دونوں ٹمیں ایک ایک بنٹا باری باری کھچنتے ہیں اور جس کا بنٹاگول دائرے میںآیاجاتا ہےتو پھر زیادہ بنٹےجینتے کی کو شش کر تا ہے اور اس طرح یہ کھیل جاری ریتا ہے۔

Ghara گھڑا

 آج کے دور میں پلاسٹک کی بوتلوں میں پانی بھر کر ریفریجریٹرز میں رکھ دیا جاتا ہے تاکہ پانی ٹھنڈا رہ سکے کئی قسم کے واٹر کولر بھی 

مارکیٹ مین دستیاب ہیں جن میں پانی کوٹھنڈا رکھا جا سکتا ہے

اگر ہم کچھ سال پیچھے چلیں جائیں جب واٹر کولر اور ریفریجریٹرز نہیں ہوا کرتے تھے تب لوگ پانی کو تھنڈا رکھنے کے لیے گھڑوں میں بھر کر رکھ دیتے تھے گھڑا مٹی کا بنتا تھا جسے گاوں میں کمہار بناتا تھا کمہار اپنی مہارت سے مٹی سے گھڑے تیار کرتا پھر ان گھڑوں کو کچھ دن تک آگ میں رکھا جاتا آگ کی بھٹی لگائی جاتی جس سے مٹی کے بنے ہوئے کچے گھڑے پک کر مظبوط ہو جاتے تھے۔پھر یہ گھڑے فروخت ہوتے گاوں میں زیادہ تر پیسوں کی بجائے اناج سے ان گھڑوں کو خریدہ جاتا تھا پھر ان میں صبح کے وقت پانی بھر کر رکھ دیا جاتا اور سارا دن وہ پانی پیا جاتا تھا یہ مٹی کا بنا ہوا ہوتا تھا اس لیے ہاہر کی گرمی اس کے اندر ڈالے ہوئے پانی کو گرم نہ کر پاتی تھی اور پانی ٹھنڈا ، تازہ رہتا تھا

آج اگر دیکھیں تو پانی سے بھرا ہوا گھڑا بہت کم نظر آتا ہے اس کی جگہ کولر اور  ریفریجریٹرز نے لے لی ہے مگر آج بھی اس گھڑے کے پانی کی تازگی اور مٹھاس نہ تو  ریفریجریٹرز کے پانی سے ملتی ہے اور نہ ہی واٹر کولر کے پانی سے گھڑے کے پانی کا اپنا ہی مزہ ہے۔

(عامر)

 

 

 

Tanga تانگہ

 A tanga (Hindi: टाँगा, Urdu: ٹانگہ, Bengali: টাঙ্গা) or tonga is a light horse-drawn carriage used for transportation in India, Pakistan, and Bangladesh.

 Tangas are a popular mode of transportation because they are fun to ride in, and are usually cheaper to hire than a taxi or rickshaw. However, in many cities, tangas are not allowed to use highways because of their slow pace. A ride in a tanga can also be troublesome if the road is uneven because its big wooden wheels lack shock absorbers. In Pakistan, tangas are mainly found in the older parts of cities and towns, and are becoming less popular for utilitarian travel and more popular for pleasure. Tangas have become a traditional feature of weddings and other social functions in Pakistan, as well as in other nations. They are usually pulled by two horses, though some require only one. Others are designed for farm work. The room under the seats is sometimes used by the coachman (locally called “coach-waan”) to keep his horse’s food and sometimes to keep luggage, if required.

 Tangas are used for economic activity, mainly to carry heavy goods within the city limits.

 Tangas were the most common means of transport in urban India and Pakistan until the early 1980s. Although autorickshaws have

overtaken them in popularity, tangas are still common today in many cities and villages.

تانگہ ایک گھوڑا گاڑی ہے جو پاکستان ،انڈیا ،اور بنگلادیش میں زیادہ استمعال ہوتی تھی مگر اب  ٹیکسی یا رکشہ عام ہونے سے تانگہ کی سواری کو اہمیت نہیں دی جاتی مگر 1980 میں تانگہ پاکستان بھارت اور بنگلادیش میں سواری کا سب سے بڑا ذریعہ تھا

منڈی بہاوالدین میں سال 1998 تک تانگے کی سواری سب سے زیادہ عام تھی ضلع منڈی بہاوالدین کے قصبوں اور دیہاتوں سے لوگ تانگے پر سفر کرے کے شہروں کی طرف آتے اور خرید و فروخت کر کے اپنے گھروں کو واپس جاتے ۔تانگے پر 6 سواریوں کی جگہ ہوتی تھی تانگے کے درایور کو کوچوان کہا جاتا ہے۔جب رکشہا عام ہونا شروع ہو گیا تو لوگوں نے تانگے کا سفر چھوڑنا شروع کر دیا کیوں کہ تانگے کی رفتار کافی سست ہوتی تھی اور اب اگر ہم 2014 میں دیکھیں تو منڈی بہاوالدین مین تانگوں کا خاتمہ ہو چکا ہے کوئی بہت کم تانگہ نظر آتا ہے جو سامان

کو ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جاتے ہوئے نظر آتا ہے 

عامرعرفان جوئیہ

Charkhah چرخہ

میرا اے چرخہ نو لکھا۔ ۔ ۔

پنجاب کی لوک ریت کا بہترین شہکار

 چرخہ ایک دیسی مشین ہے جو کم ہوتی جا رئی ہے اس سے کپاس کی پھٹی کو دھاگے میں تبدیل کیا جاتا ہے یہ لکڑی سے بنا ہوتا ہے لکڑی 

کا ایک پہیا لگا ہوتا ہے اس پہے کے ساتھ ایک ہتھی سی لگی ہوتی ہے ہتھی کو گھمانے سے پہیا گھومتا ہے اس پہیے سے اگے ایک فرکی لگی ہوتی ہے جس کو یہ پہیا گھماتا ہے اس فرکی پر کپاس کی پھٹی کی روئی کو لگا کر اسے دھاکے میں تبدیل کیا جاتا ہے 

اب نئے دور میں یہ کام بجلی پر لگی مشینیں کرتی ہیں جس کی وجہ سے چرخے کے استمعال کافی حد تک کم ہو چکا ہے اگر اب بھی ہم دیکھیں تو کافی گھروں میں جرخہ نظر آتا ہے چرخہ پنجاب اور منڈی بہاوالدین کی ثقافت کا حصہ ہے

ایک وقت تھا چرخہ ہر گھر کی ضرورت ہوا کرتی تھی پنجاب میں خواتین ہر گھر میں چرخہ کاتتی نظر آتی تھی

پوڑھی عورتیں چرخہ کاتتی زیادہ نظر آیا کرتی تھی چونکہ چرخہ بیٹھ کر کاتا جاتا تھا اس کے لیے زیادہ قوت بھی درکار نہیں ہوتی تھی بوڑھی عورتوں کو اس کا کافی ہنر تھا جس کی وجہ سے بوڑھی عورتیں جو باقی گھر کے کام کم کرتی تھی وہ چرکہ زیادہ کاتتی تھی

 

 

Hookah حقہ

 

 

 

حقہ پنجاب میں ایک بہت عام چیز ہے جو زیادہ تر گھروں میں نظر آتا ہے منڈی بہاوالدین میں حقے کا بہت زیادہ استعمال ہوتا آرہا ہے اس کے علاوہ منڈی بہاوالدین میں تمباکو کی کاشت بھی کافی ہوتی ہے

اب نوجوان نسل زیادہ تر سیگریٹ کی طرف آ گئی ہے مگر بزرگ اب بھی زیادہ حقے کا استعمال کرتے ہیں

حقہ (ہندی: हुक़्क़ा، عربی: شيشة) ایک نالی یا ایک زائدنالیوں پر مشتمل تمباکو نوشی کے لئے استعمال کیا جانے والا ایک قدیم آلہ ہے۔ جس کا آبائی وطن انڈیا کو قرار دیا جاتا ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اس کی مقبولیت میں اضافہ ہوتا جارہا ہے، خصوصاً عرب دنیا میں۔ اردو میں موجودہ مستعمل لفظ فی الحقیقت عربی ہی سے آیا ہے اور وہاں اسکو حـق سے ماخوذ کیا جاتا ہے، یعنی یوں کہہ سکتے ہیں کہ حقہ کی اصل الکلمہ (etymology) حق ہے۔ اردو میں حق عام طور پر سچائی پر ہونے کے معنوں میں زیادہ استعمال ہوتا ہے۔ حق کے ان دونوں مفاہیم میں افتراق کی وجہ اعراب کے استعمال سے انکا تلفظ الگ کرنے کی ہے؛ سچائی کے لیۓ جو عربی کا حق استعمال ہوتا ہے اس میں ح پر زبر لایا جاتا ہے جبکہ حقہ کے لیۓ جو حق آتا ہے اس میں ح پر پیش کو لایا جاتا ہے جس کے معنی ظرف ، چلم ، حوض اور جوف وغیرہ کے آجاتے ہیں اور اسی ظرف کے تصور سے جو کہ حقے کی چلم سے مترادف ہے حقے کا لفظ اخذ کیا گیا ہے۔ ایک حقہ پانی کی پالائش اور بلاواسطہ حرارت کی مدد سے کام کرتا ہے۔ اس کو مختلف جڑی بوٹیوں اور غذائی ذائقوں میں بھی استعمال کیا جاسکتاہے۔ علاقے اور دستیابی کے بناء پر بہت سے عرب، بھارتی، ایرانی اور ترک علاقوں میں حقے کے کئی نام ہیں۔ اسی طرح اس کا ایک نام نرگیلا (Nargila ) جو کہ لبنان، شام، عراق، اردن، اسرائیل، البانیا، بوسنیا، مصر، ترکی، آرمینیا، بلغاریہ اور رومانیہ میں رائج ہے حالانکہ عموماً لفظ کی ابتداء میں N یا ن کا استعمال عربی میں ساکن پڑھا جاتا ہے۔ نرگیلا فارسی لفظ (nārgil ) نارگیل سے نکلا ہے، جس کے معنی ناریل کے ہیں جبکہ سنسکرت میں اس کو نرکیلا (नारिकेला) کہا جاتا ہے اور اس کی وجہ یہ بتائی جاتی ہے کہ ابتدائی دنوں میں حقہ ناریل کے چھلکوں سے بنایا جاتا تھا۔  اسی طرح عربی میں حقہ کے لئے لفظ شيشة استعمال کیا جاتا ہے جوکہ فارسی کے لفظ شہشہ سے لیا گیا ہے، جس کے معنی کانچ کے ہیں اور حقے کے لئے یہ لفظ مصر اور خلیج فارس کے ممالک (بشمول کویت، بحرین، قطر، متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب) اور مراکش، تیونس، صومالیہ اور یمن میں بکثرت سے استعمال کیا جاتا ہے۔ ایران میں حقے کو غلیون، قلیون اور قلیان بھی کہا جاتا ہے۔ پاکستان اور بھارت میں اس کو حقہ کہا جاتاہے۔ حقے کے لئے انگریزی میں “ہبل ببل“ “hubble-bubble” اور “ہبلی ببلی“ “hubbly-bubbly” کی اصطلاح بھی استعمال کی جاتی ہے، جس کی وجہ اس کو پیتے وقت گڑ گڑ کی آواز ہے جو کہ بلبلوں کے پیدا ہونے سے بننے والی آواز سے مشابہت رکھتی ہے۔